Violation of School EDUCATION DEPARTMENT PUNJAB rules by Imran Abbas

Violation of School EDUCATION DEPARTMENT PUNJAB rules by Imran Abbas
Khushab (Online Desk) Mr. Muhammad Imran Abbas working as Headmaster in GOVERNMENT HIGH SCHOOL Rangpur Baghoor District Khushab. He is trying to destroy the EDUCATION system.
According to sources he trying to assign irrelevant ASSIGNMENTS to IT TEACHER rather a clear guidelines/ letter already issued number of times by school Education DEPARTMENT PUNJAB that ” No head Teacher allowed to assigned any job other than COMPUTER Science Teaching to IT Teachers.
If Mr. Imran Abbas does not know the rules of School EDUCATION DEPARTMENT than how he is working as Headmaster in GOVERNMENT SECONDARY SCHOOL Rangpur Baghoor District Khushab.
Remember a clerk is also working with Mr. Muhammad Imran Abbas in same school. Mr. Imran Abbas always avoid to ask him any clerical work.
Click to read letter for Irrelevant ASSIGNMENTS ASSIGN to IT Teachers.






 

Without reading the NOTIFICATIONS and letters issued by Hounourable Secretary EDUCATION and School EDUCATION DEPARTMENT, he write the order book.
He try to divert the TEACHER from teaching towards the clerical work rather than Punjab Government provide him a clerk which taking million of rupees in form of Salary.
The prime responsibility of clerk is to deal all work other than teaching. If clerk is not able to do his Jon and prime responsibilty of clerk than he must remove from Service. So that Government save million of rupees.
Read order book.

Order Book written by Mr. Imran Abbas
File photo of Imran Abbas Headmaster GBHS Rangpur Baghoor District Khushab

Some old History of this issue.

تھوڑی سے ہسٹری بھی شیئر کر دیتا ہوں.
ہمارے سکول کو ISA پروگرام کے لیے سلیکٹ کیا گیا. جس کے لیے مجھے کوآرڈینیٹر سلیکٹ کیا گیا. اسی سلسلے میں 8 اکتوبر سے 10 اکتوبر تک ہماری core skills کی ٹریننگ بھی ہوئی جس میں ہم نے شرکت کی. پہلے دن ہیڈ ماسٹر صاحب بھی بلائے گئے تھے. میں نے ان سے گزارش کی کہ ہمیں کچھ سامان چاہیے ہو گا ایکٹیویٹز کے لیے. کل انھوں نے مجھے فون کر کے کہا کے واپسی پہ اپنے پیسوں سے سامان لیتے آنا. میرا گھر ٹریننگ مرکز سے تقریباً 80 کلومیٹر دور ہے اور بروقت پہنچنے کے لیے میں موٹر سائیکل پہ آتا جاتا رہا ہوں. ٹریننگ سے چھٹی کا وقت 4.30 بجے شام تھا.
میں نے گزارش کی کہ میرے پاس اتنا وقت نہیں کہ میں واپسی پہ بازار جا کے سامان لے آؤں اور کل میری طبیعت خراب تھی اس کا بھی بتایا. صبح میں نے طبیعت کی خرابی کی وجہ سے چھٹی مانگی تو انہوں نے سامان نہ لانے کی وجہ سے انکار کر دیا. میں نے سکول حاضر ہو کر ان سے پھر چھٹی مانگی اور سامان نہ لاسکنے کی وجہ بھی بتائی لیکن انھوں نے چھٹی نہ دی. جس پہ میں نے کہا کہ یہ میرا حق ہے. میں پہلے بھی سکول کے کام کرتا رہتا ہوں آور ایک بات کی وجہ سے آپ ایشو نہ بنائیں. لیکن انھوں نے مجھے کلاس میں بھیج کے سامان نہ لانے کی جواب طلبی بھی کی. اس کے بعد میں دفتر میں چلا گیا اور احتجاج کیا اور کہا کہ میں آئیندہ کوئی دفتری کام نہ کروں گا تو انھوں نے expenditure Statement بنانے کو کہا تو میں نے انکار کر دیا. اس پہ بھی انھوں نے جواب طلبی کر لی. میں تین دن سکول نہ تھا تو اج کلاس ہفتم کی تعداد کم تھی. انچارج میں ہوں تو اس کی بھی آرڈر بک لکھ دی. آج کے دن میں ہی انھوں نے تین آرڈر بکس لکھی ہیں میرے خلاف

Read old pages of order book.

It is requested to Dr. MURAD Rass sb that PLEASE fulfill your promises.

استاد کو پڑھانے دو۔
کلرک سے کلیرکل کام لو۔